پاکستان اور بھارت کا کرتارپور راہداری منصوبہ جلد مکمل کرنے پر اتفاق

لاہور: کرتارپور راہداری پر پاکستان اور بھارت کے درمیان مذاکرات اٹاری میں ساڑھے دس بجے شروع  ہوئے۔ ڈی جی ساؤتھ ایشیاء و سارک ڈاکٹر محمد فیصل 18 رکنی پاکستانی وفد کی قیادت کی۔ جب کہ بھارتی وفد کی قیادت جوائنٹ سیکرٹری داخلہ ایس سی ایل داس کر رہے تھے۔

مذاکرات کے بعد جاری اعلامیہ کے مطابق راہداری معاہدے کے مختلف پہلووں اورشقوں پر تفصیلی اور تعمیری بات چیت ہوئی، فریقین نے کرتار پورصاحب کوریڈور کی جلد تکمیل کے لیے کام کرنے پر اتفاق کیا، فریقین کے ماہرین نے بھی تکنیکی پہلوئوں کا جائزہ لیا۔

اعلامیہ کے مطابق پاکستان اور بھارت کے درمیان مذاکرات کا آئندہ اجلاس 2 اپریل کو واہگہ میں بلانے پر اتفاق ہوا، جس سے قبل دونوں ملکوں کے تکنیکی ماہرین کی 19 مارچ کو ملاقات ہوگی۔ جس میں ماہرین مجوزہ زیرو پوائنٹس کے امور کو حتمی شکل دیں گے۔

قبل ازیں واہگہ سے اٹاری روانگی سے قبل ڈاکٹر محمد فیصل نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ وہ مثبت سوچ  اور جنگ کو امن اور دشمنی کو دوستی میں بدلنے کا پیغام لے کر جارہے ہیں۔

ڈاکٹرفیصل نے کہاکہ کشیدگی میں کمی خطے میں امن کیلئے ضروری ہے۔ انہوں نے اس موقع پر ہمسائیگی کے حوالے سے خوبصورت شعر کچھ یوں پڑھا۔

اک شجر ایسا بھی محبت کا لگایا جائے۔۔۔۔۔جس کا ہمسائے کے آنگن میں بھی سایہ جائے۔

Comments are closed.