لاہور ہائیکورٹ سے اثاثہ جات کیس میں پی ٹی آئی رہنما علیم خان کی ضمانت منظور

لاہور: آمدن سے زائد اثاثہ جات کیس میں تحریک انصاف کے سینئر رہنما اورسابق صوبائی وزیر عبدالعلیم خان کی لاہور ہائیکورٹ سے ضمانت مل گئی۔ عدالت نے علیم خان کو دس ،دس لاکھ  روپے کے ضمانتی مچلکے جمع کرانے کا حکم دیا ہے۔

عدالت کے جسٹس علی باقر نجفی کی سربراہی میں دورکنی بینچ نے سابق صوبائی وزیر عبدالعلیم خان کی درخواست ضمانت پر سماعت کی۔ نیب کی جانب سے موقف اپنایا گیا کہ ملزم جوڈیشل ریمانڈ پر جیل میں قید ہے، علیم خان نے زمین کی قیمت کم دکھائی،، جسٹس علی باقر نجفی نے ریمارکس دیئے یہ سب تو علیم خان نے گوشوارے میں لکھ دیا، آپ یہ بتائیں ان کے سورسز تھے؟ بیرون ملک سے اتنے پیسے آئے، فلاں اکائونٹس سے پیسے آئے، اسطرح کچھ بتائیں۔

تفتیشی افسر نے بتایا کہ علیم خان کو بیرون ملک سے رقوم منتقل ہوئیں،علیم خان کی والدہ اوروالد سرکاری ملازم تھے، ان کا کوئی ذریعہ آمدن پاکستان میں نہیں تھا۔ علیم خان 50 کروڑ روپے کی وضاحت نہیں دے سکے،، ان کے اکاونٹنٹ نے بھی بیان میں کہا کہ پیسے ہنڈی کے ذریعے بھیجے گئے۔ نیب نے علیم خان کے اخراجات اور ذرائع آمدن کی دستاویزات عدالت میں پیش کیں۔

عدالت نے کہا کہ دستاویزات پر ملزم کے وکیل جواب دینا چاہیں گے؟ جس پر علیم خان کے وکیل نے کہا کہ وہ جواب نہیں دیں گے کیونکہ اس پر نیب کے افسر کے دستخط موجود نہیں۔ عدالت نے فریقین کے دلائل مکمل ہونے پر فیصلہ سناتے ہوئے علیم خان کی درخواست ضمانت منظور کر لی۔

Comments are closed.