کتنے پاکستانیوں نے پی ایچ ڈی کی ۔۔۔؟

اسلام آباد: گزشتہ دس برسوں کے دوران 14ہزار 151 پاکستانی طلبا و طالبات نے پی ایچ ڈی کی ڈگریاں حاصل کی، تاہم اعلیٰ تعلیم یافتہ ان پاکستانیوں کو مناسب روزگار میسر نہیں، جس کی وجہ سے مستقبل محفوظ بنانے کے لیے اکثریت بیرون ملک جانے لگی۔

مقامی یونیورسٹیوں سے 11 ہزار991 جب کہ بیرون ممالک جامعات سے 2 ہزار160 پاکستانی طلبا و طالبات نے پی ایچ ڈی کی ڈگریاں مکمل کیں۔ جن میں سے اکثریت بے روزگار ہے، وزیراعظم کی یقین دہانیوں اور بنی گالہ احتجاج کے باوجود اعلیٰ تعلیم حاصل کرنے والوں میں اکثریت بے روزگار ہے، تو کئی بیرون ملک چلے گئے ہیں۔

وزارت تعلیم و پیشہ وارانہ تربیت کے اعداد و شمار کے مطابق گزشتہ دس برسوں کے دوران مجموعی طور پر 11 ہزار 991 طلبا و طالبات نے پی ایچ ڈی کی ڈگریز حاصل کیں، جن میں 7ہزار 997 مرد جبکہ 3994 خواتین پی ایچ ڈی ہولڈرز شامل ہیں۔

 اس عرصے میں پنجاب کے سب سے زیادہ 4 ہزار 999 طلبا و طالبات نے پی ایچ ڈی کی ڈگریاں مکمل کیں۔دوسرے نمبر پر وفاقی دارالحکومت ہے جہاں سے 3 ہزار 24 طلبا و طالبات نے پی ایچ ڈی کی، سندھ سے 2300، خیبرپختونخوا سے 1 ہزار 545 اعلیٰ ترین ڈگری حاصل کی۔ اسی طرح آزاد جموں و کشمیر کے 66، بلوچستان کے 54 اور گلگت بلتستان کے 3 طلبہ پی ایچ ڈی مکمل کرنے والوں میں شامل ہیں۔

ہائیر ایجوکیشن کمیشن کی سکالرشپ پر 2 ہزار160 طلبا و طالبات نے بیرون ممالک کی جامعات سے پی ایچ ڈی کی ڈگریاں حاصل کی۔ بیرون ممالک سے پی ایچ کرنے والوں میں پنجاب اور وفاقی دارالحکومت کے 1019، خیبرپختونخوا کے 495 جب کہ سندھ کے 494 طلبا و طالبات شامل ہیں۔ بلوچستان کے 91، آزاد جموں و کشمیر کے 40 جبکہ گلگت بلتستان کے 21 طلباو طالبات نے بیرون ممالک سے پی ایچ ڈی مکمل کی۔

پاکستانیوں نے گزشتہ دس برسوں کے دوران سب سے زیادہ پی ایچ ڈی انجینئرنگ اینڈ ٹیکنالوجی کے شعبے میں کی،882 طلبہ نے پی ایچ ڈی کے لیے انجینئرنگ اینڈ ٹیکنالوجی کے شعبہ کا انتخاب کیا۔422 طلبا و طالبات نے فزکس سائنسز جب کہ 284 طلبہ نے بائیولوجیکل اینڈ میڈیکل سائنسز میں پی ایچ ڈی کی۔

واضح رہے کہ وزیراعظم عمران خان کی رہائش گاہ کے باہر پی ایچ ڈی ہولڈرز بیروزگاری کے خلاف متعدد بار احتجاج کر چکے ہیں۔ لیکن اعلیٰ تعلیم یافتہ طبقے کو روزگار کی فراہمی کیلئے تاحال کوئی ٹھوس اقدامات نہیں اٹھائے گئے۔

Comments are closed.