نواز شریف کیلئے نئی مشکل، نیب کو جیل میں سابق وزیراعظم سے تفتیش کی اجازت

اسلام آباد: احتساب عدالت نے  2016 میں سارک کانفرنس کے شرکاء کے لیے منگوائی گئی بلٹ پروف گاڑیوں کے ذاتی استعمال پر جاری انکوائری میں نیب کو نواز شریف سے جیل میں تفتیش کرنے کی اجازت دے دی ہے۔

احتساب عدالت کے جج محمد ارشد ملک نے نیب کی درخواست پر سماعت کی جس میں سارک کانفرنس کی بلٹ پروف گاڑیوں کے ذاتی استعمال پر انکوائری میں نواز شریف سے جیل میں تفتیش کی اجازت طلب کی گئی تھی۔ نیب کی درخواست میں کہا گیا تھا کہ جرمنی سے 34 بلٹ پروف گاڑیاں ڈیوٹی ادائیگی کے بغیر خریدی گئیں جو سارک کانفرنس 2016 کے مہمانوں کے لیے تھیں مگر ان میں سے 20 گاڑیاں نواز شریف نے اپنے قافلے میں شامل کرلیں جو نواز شریف کے علاوہ مریم نواز کے بھی ذاتی استعمال میں رہیں۔

نیب کے مطابق اس انکوائری میں  شاہد خاقان عباسی کا بیان قلمبند کیا جا چکا  ہے جبکہ فواد حسن فواد اور سابق سیکرٹری خارجہ سے بھی پوچھ گچھ کی گئی ہے۔ نیب کے مطابق وزارت خارجہ کے افسران نے بلٹ پروف گاڑیوں کے معاملے میں اختیارات سے تجاوز کیا تھا۔

Comments are closed.