منی لانڈرنگ اوراشتعال انگیز تقریرکے الزامات پر الطاف حسین گرفتار

لندن/ اسلام آباد: منی لانڈرنگ اوراشتعال انگیز تقریر کے مقدمات میں متحدہ قومی موومنٹ کے بانی الطاف حسین کو ان کے گھر سے گرفتارکر کے مقامی پولیس اسٹیشن منتقل کر دیا گیا ہے۔ جب کہ ان کے گھر کی تلاشی اور معائنہ کیا گیا۔

لندن پولیس کا کہنا ہے کہ اشتعال انگیز تقاریر کےحوالے سے تحقیقات کے سلسلے میں 60 سالہ شخص کو گرفتار کیا گیا ہے جس کا تعلق ایم کیوایم سےہے، گرفتارشخص کو ساؤتھ لندن پولیس اسٹیشن منتقل کر دیا گیا ہے۔پولیس اعلامیے کے مطابق گرفتارشخص پرنفرت انگیز مواد کی حوصلہ افزائی کاالزام ہے، ملزم نے سیکشن 44کرائم ایکٹ 2007 کی خلاف ورزی کی، گرفتارشخص کےگھر کی تلاشی لی جارہی ہے، نارتھ ویسٹ میں کمرشل ایڈریس کی بھی چھان بین کی جا رہی ہے۔

گرفتاری 2016 میں متنازعہ تقریرکے تناظرمیں لائی گئی،اور اس حوالے سے برطانوی پولیس کے تفتیش کار تحقیقات سے متعلق پاکستانی حکام کے ساتھ رابطےمیں ہے۔ دوسری جانب لندن میں رابطہ کمیٹی کے اراکین کی جانب سے بانی ایم کیوایم کی رہائی کیلئے وکیل کا بندوبست کیا جا رہا ہے۔

ایف آئی اے ذرائع کے مطابق متحدہ بانی کو منی لانڈرنگ اور نفرت انگیز تقاریر کے مقدمات میں گرفتارکیا گیا، پاکستان کی وفاقی تحقیقاتی ایجنسی کے انسداد دہشت گردی ونگ نے شواہد اسکاٹ لینڈ لارڈ کے حوالے کیےتھے، تین سال تک ایف آئی اے کے انسداد دہشت گردی ونگ اور برطانوی پولیس کے درمیان معلومات کا تبادلہ کیاجاتارہا۔ سکاٹ لینڈ یارڈ  کی ٹیم دو بار شواہد کا جائزہ لینے پاکستان آئی۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ الطاف حسین کی گرفتاری کے بعد ایف آئی اے کی تفتیشی ٹیم تشکیل دے دی گئی، جس کی سربراہی ڈائریکٹر انسداد دہشت گردی ونگ مظہر الحق کریں گے۔ بانی متحدہ سے منی لانڈرنگ اور نفرت انگیز تقاریر کے معاملے پر پوچھ گچھ کرے گی۔ایف آئی اے نے برطانوی وکیل ٹوبے کی خدمات حاصل کرلیں، عدالت میں بانی متحدہ کی ضمانت کی درخواست کی مخالفت بھی کی جائے گی۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ سکاٹ لینڈ کی جانب سے گرین سگنل ملتے ہی ٹیم لندن روانہ ہو گی۔

Comments are closed.