بھارتی فوج کی فائرنگ سے 3جوانوں کی شہادت، بھارتی سفارتکار کی دفترخارجہ طلبی

اسلام آباد: لائن آف کنٹرول پر لیپا اور بٹل سیکٹر میں بھارتی فوج کی بلا اشتعال فائرنگ سے پاک فوج کے 3 جوانوں کی شہادت پر پاکستان نے شدید احتجاج کیا ہے۔

دفترخارجہ کی جانب سے جاری بیان کے مطابق ڈی جی ساؤن ایشیاء و سارک ڈاکٹر محمد فیصل نے بھارتی ڈپٹی ہائی کمشنر گوروو آہلووالیا کو دفترخارجہ طلب کرکے بھارتی فوج کی جانب سے ایل او سی پر سیز فائر معاہدے کی خلاف ورزی اور بلا اشتعال فائرنگ سے پاک فوج کے جوانوں کی شہادت پر شدید احتجاج کیا۔

انہوں نے بھارتی ڈپٹی ہائی کمشنر کو احتجاجی مراسلہ بھی حوالے کیا، جس میں کہا گیا ہے کہ بھارتی افواج لائن آف کنٹرول پر تسلسل سے شہری آبادی کو بھاری اسلحہ سے نشانہ بنا رہی ہیں، آج بھی  بھارتی افواج نے ایل او سی کے لیپا اور بٹل سیکٹر پر بلا اشتعال فائرنگ کی، بھارتی فائرنگ سے پاک فوج کے 3 جوانوں نے جام شہادت نوش کیا۔

مراسلے میں تنبیہ کی گئی ہے کہ بھارت کی طرف سے جنگ بندی کی خلاف ورزی علاقائی امن و سلامتی کے لئے خطرہ ہے۔ بھارتی کی طرف سے 2017 سے جنگ بندی کی خلاف ورزیوں میں تیزی آئی ہے اور اس دوران بھارت کی جانب سے 1 ہزار 970 بار سیز فائر معاہدے کی خلاف ورزی کی گئی،

پاکستان نے بھارت پر 2003 کی جنگ بندی مفاہمت کا احترام کرنے کا زور دیتے ہوئے کہا ہے کہ بھارت اپنی افواج کو جنگ بندی پر مکمل عملدرآمد کی ہدایت کرے اور لائن آف کنٹرول اور ورکنگ باونڈری پر بھارت امن برقرار رکھے، جب کہ بھارت اقوام متحدہ کے امن مشن کو سلامتی کونسل کی قراردادوں کے مطابق کردار ادا کرنے دے۔

واضح رہے کہ لائن آف کنٹرول پر بھارتی فوج نے ایک بار پھر سیز فائر معاہدے کی خلاف ورزی کرتے ہوئے بلااشتعال فائرنگ کی جس کے نتیجےمیں پاک فوج کے 3 جوان شہید ہوگئے، جب کہ پاک فوج کی بھرپور جوابی کارروائی میں بھارتی فوج کے 5 اہلکار ہلاک اور متعدد زخمی ہوئے، اور متعدد بھارتی بنکر اور چوکیاں بھی تباہ ہوگئیں۔

Comments are closed.