پاکستان سمیت دنیا بھر کی اسٹاک مارکیٹ میں شدید مندی، تیل بھی مزید سستا

کراچی: کورونا وائرس کی عالمی وباء کے سبب دنیا بھر کی اسٹاک مارکیٹ شدید مندی کا شکار ہیں، جب کہ خام تیل کی قیمت 18 سال کی کم ترین سطح پر آگئی۔

عالمی وباء کے باعث دنیا بھر کی طرح پاکستان کی اسٹاک مارکیٹ بھی مسلسل گراوٹ کا شکار رہی، گزشتہ ایک ہفتے کے دوران پاکستانی اسٹاک مارکیٹ کا 100 انڈیکس 5393پوائنٹس کم ہو کر30667 پوائنٹس کی سطح پرآگیا، پاکستانی اسٹاک مارکیٹ کو 2008ء کے بحران کے بعد کسی ایک ہفتہ میں سب سے زیادہ مندی کا سامنا کرنا پڑا اور انڈیکس میں ایک ہی ہفتہ کے دوران 15فیصد تک کمی واقع ہوئی۔

پاکستان اسٹاک مارکیٹ میں گزشتہ ہفتے مندی کا طوفان سرمایہ کاروں کے 900 ارب روپے نگل گیا چھوٹے سرمایہ کاروں کا دیوالیہ نکل گیا۔ گزشتہ ہفتہ پانچ میں چار روز مارکیٹ اتنی تیزی سے گری کہ اسے خودکار حفاظتی مکینزم کے تحت چار مرتبہ 45 منٹ کے لیے بند کرنا پڑا۔

مندی کے باعث غیرملکی سرمایہ کاروں نے پاکستان اسٹاک مارکیٹ میں کی جانے والی 2کروڑ ڈالر کی سرمایہ کاری نکال لی۔ کاروباری ہفتے میں 7607 پوائنٹس کے بینڈ میں کاروبار ہو،انڈیکس کی بلند ترین سطح 36060 ، کم ترین 28453 رہی۔ کاروباری ہفتے میں 1 ارب 19 کروڑ شیئرز کے سودے ہوئے۔ ہفتہ وار کاروباری مالیت 43 ارب روپے رہی، مارکیٹ کیپٹلائزیشن 887 ارب روپے کم ہوکر 5907 ارب ہوگئی ہے۔

ایک ہفتے کے دوران دنیا بھر کی اسٹاک مارکیٹوں میں مندی کے بادل چھائے رہے۔ امریکی اسٹاک مارکیٹ میں 21 فیصد کمی ریکارڈ کی گئی، چین کی اسٹاک مارکیٹ میں7 فیصد کمی، جاپان کی اسٹاک مارکیٹ میں 8 فیصد،ہانگ کانگ 5 فیصد کمی، فرانس 6 فیصد،جرمنی 7 فیصد اور بھارت کی اسٹاک مارکیٹ میں 14 فیصد کمی رہی۔

دوسری جانب ایک ہفتے کے دوران خام تیل کی قیمتوں میں بھی کمی ہوئی، امریکی خام تیل 29 فیصد سستا ہونے کے بعد 22 ڈالر 63 سینٹ فی بیرل کی سطح پر آ گیا، جب کہ برطانوی خام تیل 20 فیصد سستا ہوگیا ہے۔ قیمت کم ہونے کے بعد برطانوی خام تیل کی قیمت 26 ڈالر 93 سینٹ فی بیرل کی سطح پر آگئی۔

Comments are closed.