کورونا وائرس کے عالمی معیشت پر اثرات عارضی نوعیت کے ہوں گے، آئی ایم ایف

اسلام آباد: بین الاقوامی مالیاتی فنڈ نے کہا ہے کہ کورونا وائرس کا پھیلاؤ شدید ہونے کے باوجود عالمی معیشت پر اس کے اثرات عارضی نوعیت کے ہوں گے، دنیا بھر میں اس وبا کے نتیجے میں پیدا شدہ صورتحال سے نمٹنے کے لیے مربوط اقدامات کی ضرورت ہے۔

آئی ایم ایف کے شعبہ فنڈ اسٹریٹجی و ریویو کے سربراہ مارٹن موہلیسن نے ایک انٹرویو میں کہا کہ کورونا وائرس کے عالمی معیشت پر شدید اثرات مرتب ہوں گے لیکن ان سے نمٹنے کے لیے متعلقہ حکومتوں یا مرکزی بینکوں کو مربوط اقدامات کرنا ہوں گے۔ کورونا بحران کا عالمی معیشت پر بہت کم اثر پڑا ہے جس کی وجہ مستحکم معیشت اور روزگار کی نسبتاً بہتر شرح ہے۔

اپنی بات جاری رکھتے ہوئے انہوں نے توقع ظاہر کی کہ آئندہ ماہ تک اس سے بچ نکلنے میں کامیاب رہیں گے۔ ان کا کہنا تھا کہ یہ بحران ایسے وقت آیا جب ہم اس طرح کے جھٹکے کے قابل ہوچکے ہیں،اس کے اثرات عالمی معیشت پر یقینی طور پر سخت ہوں گے تاہم امید ہے کہ ہم آئندہ ماہ تک اس سے نکلنے کا راستہ نکال لیں گے۔

مارٹن موہلیسن نے مزید کہا کہ دنیا بھر میں حکومتوں اور مرکزی بینکوں نے کورونا انفیکشن سے متاثرہ معیشت کو مستحکم کرنے کے لیے کاروباری سرگرمیوں کے فروغ کے لئے قابل قدر مالی و دیگر اقدامات اٹھائے ہیں جن سے کاروباری سرگرمیوں کو سہارا ملے گا۔

Comments are closed.